1
Rabiul Awwal

مدینہ منورہ سے طبع شدہ فارسی ترجمۂقرآن

بسم اللہ الرحمن الرحیم                                                         

مدینہ منورہ سے طبع شدہ فارسی ترجمۂقرآن..........ایک عظیم خدمت

قرآن کریم رب العالمین کی جانب سے نازل شدہ آخری کتاب ہےجوآخری پیغمبرسرکاردوعالم صلی اللہ علیہ وسلم کے ذریعہ اس آخری امت کودی گئی ہے،قرآن کریم سے تعلق وربط اورقرآنی تعلیمات پرعمل عروج کاسبب اوراس سے اعراض ودُوری تنزل وانحطاط کاذریعہ ہے۔شیخ العالَم المعروف بہ شیخ الہندمولانامحمودحسن دیوبندی رحمہ اللہ مالٹاکی جیل سے خلاصی پاکرہندوستان دیوبندپہنچے توایک رات علمائے کرام کے مجمع میں ارشادفرمایا:مالٹاکی زندگی میں ،اسیری کے زمانہ میں غوروفکراورتدبرکے بعدمیں نے دوسبق سیکھے ہیں،میں نے جہاں تک جیل کی تنہائیوں میں اس پرغور کیاکہ پوری دنیامیں مسلمان دینی اوردنیوی ہرحیثیت سے کیوں تباہ ہورہے ہیں،مسلمانوں کاانحطاط وزوال کیوں ہے؟ توا س کے دو سبب معلوم ہوئے،ایک ان کاقرآن کوچھوڑدینا،دوسرے آپس کے اختلافات اورخانہ جنگی۔چنانچہ قرآنِ کریم  سے مسلمانوں کووابستہ رکھنے اوراس کی تعلیمات سمجھانے کے لئے قرنِ اول سے ہی کلامِ الہٰی کی تفاسیرکاسلسلہ شرو ع ہوا،عربی زبان میں قرآن کریم کی بے شمار تفاسیرلکھی گئیں،جن میں سے بعض مختصر اوربعض دسیوں جلدوں پرمشتمل ہیں۔عربی زبان کے بعد فارسی تمام زبانوں پر مقدم ہے،فارسی وہ پہلی زبان ہے جس میں قرآن وحدیث کے اولین ترجمے ہوئے،ہندوستان میں مغلیہ حکومت  کے قیام کے بعد ’’فارسی زبان‘‘دفتری،علمی ،تصنیفی اورخط وکتابت کی زبان تھی،بالفاظِ دیگرفارسی ’’سرکاری زبان ‘‘کی حیثیت سے رائج تھی،اورہرمسلمان فارسی سمجھتاضرورتھااگرچہ بول،لکھ نہ سکتاتھا۔ مسندالہندشاہ ولی اللہمحدث دہلوی ؒ بارہویں صدی کے مجددتھے،آپ کے اورآپ کے خاندان کے علمی کارنامے ساری دنیامیں مشہورہیں،شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمہ اللہ نے خیرخواہی کے جذبہ کے تحت ، خلقِ خداکی اصلاح اورانہیں قرآنی تعلیمات واحکامات سے روشناس کرانے کے لئے قرآن کریم کافارسی میں ترجمہ کرنے کاقصد وارادہ فرمایا،شاہ صاحبؒ جب  حجازِ مقدس کے سفرسے واپس ہندوستان پہنچے تواس ارادے کوعملی شکل دی،اور ’’فتح الرحمن فی ترجمۃ القرآن‘‘کے نام سے قرآن کریم کافارسی ترجمہ پایۂ تکمیل کوپہنچا۔عام طورپرمشہورہے کہ شاہ صاحبؒ سب سے پہلے فارسی میں قرآن کریم کے مترجِم ہیں، حقیقت یہ ہے کہ شاہ صاحبؒ کے اس فارسی ترجمے سے پہلے بھی ہندوستان میں کےبعض فارسی تراجم کانام لیاجاتاہے،لیکن یاتووہ ناپیدتھے یاعوام الناس کی رغبت کے لئے ان کی نسبتیں بدل دی گئیں تھیں،جیساکہ علامہ میرسیدشریف جرجانیؒ کے فارسی ترجمہ کوشیخ سعدیؒ کاترجمہ قراردیاجاتاتھا۔جس طرح فارسی زبان میں قرآن کریم کی خدمت شروع ہوئی اسی طرح فارسی زبان میں حدیث شریف کے بھی تراجم کی بنیادپڑی ،چنانچہ سب سے پہلے احادیث کے فارسی تراجم میں حضرت شیخ عبدالحق محدث دہلوی ؒ نے مشکوۃ شریف کاترجمہ اشعۃ اللمعات کے نام سے چارضخیم جلدوں میں تحریرفرمایاتھا،ہندوستان اورافغانستان میں اس کے ذریعہ حدیث کی بڑی خدمت ہوئی،اسی طرح شاہ ولی اللہ محدث دہلوی ؒنے مؤطاامام مالک کاپہلافارسی ترجمہ کیا،دہلی کی علم حدیث میں یہ ممتازخدمت ہے۔فارسی زبان کے بعد جب اُردونے فارسی کی جگہ لینی شرو ع کی  تواس انقلابی صورتحال کوبھانپ کر شاہ صاحبؒ کے صاحبزادے شاہ عبدالقادردہلویؒ نے ضرورت محسوس کرتے ہوئے شاہ صاحبؒ کے فارسی ترجمۂ قرآن کے تقریباً پچاس سال بعد قرآن کریم کارائج الوقت اُردوزبان میں بامحاورہ ترجمہ کیا،یہ ترجمہ انتہائی مقبول ہوااوربعدکے تمام تراجم کے لئے یہ ترجمہ سندکی حیثیت رکھتاہے،شاہ عبدالقادر ؒ کایہ اُردوترجمہ برصغیرکے مسلمانوں میں ’’الہامی ترجمہ‘‘کے نام سے مشہورہے۔شاہ عبدالقادردہلویؒ کے اِس پہلے اُردوترجمے کے بعد ان کے برادرِعزیزشاہ رفیع الدین ؒ نے قرآن کریم کاتحت اللفظ اُردوترجمہ کیا،یہ دونوں تراجم عوام میں تلاوتِ قرآن کریم کے ساتھ پڑھے جانے لگے،مذکورہ بالاتینوں تراجم نے مسلمانوں میں دعوت واصلاح کاجوکارنامہ سرانجام دیاہے بلامبالغہ کوئی بھی اسلامی حکومت اپنے تمام تروسائل بروئے کارلاکربھی وہ کارنامہ سرانجام نہیں دے سکتی۔ان تراجم کے علاوہ حضرت شیخ الہندؒ کاترجمۂ قرآن بھی مشہورومعروف ہے،حضرت شیخ الہندؒکےترجمہ کا بنیادی مآخذبھی شاہ عبدالقادردہلوی اورشاہ رفیع الدین دہلویؒ کے تراجم ہی ہیں،اِسے بقیہ تراجم سے ممتازرکھنے کے لئے حضرت شیخ الہندؒ نے اس کانام ’’موضح الفرقان ‘‘تجویزفرمایاتھا۔حضرت شیخ الہندؒ نے ترجمہ کے ساتھ مفیدتفسیری وضاحتیں بھی قلمبندفرمائی تھیں لیکن آپ کی حیاتِ مبارکہ میں یہ کام صرف سورۂ آل عمران تک ہوسکا،بقیہ حصے کی تکمیل شیخ الاسلام علامہ شبیراحمدعثمانیؒ نے فرمائی اوراب یہ تفسیرعثمانی کے نام سے مشہورہے۔آمدم برسرمطلب،سعودی حکومت نے قرآن کریم اورمختلف زبانوں میں اس کے ترجمہ کی اشاعت کے لئے ’’مجمع الملک فہدلطباعۃ المصحف الشریف‘‘(king fahd glorious quran printing complex)کے نام سے مدینہ منورہ میں ایک ادارہ قائم کررکھاہے،یہ ادارہ قرآن کریم کی اشاعت کاعظیم الشان بیڑہ اٹھائے ہوئے ہے،یہاں سےقرآن کریم اورمختلف زبانوں میں تراجم چھپ کر دنیاکے کونے کونے میں پہنچ رہے ہیں،اہل علم کی ایککمیٹی تمام امورکی مستقل جانچ پڑتال کرتی ہے،اوران کی منظوری کے بعد تراجم وغیرہ کوحتمی شکل دی جاتی ہے۔اس ادارے سے اب تک قرآن کریم کے کروڑوں نسخے اورتراجم تیارہوکرمسلمانوں کوہدیہ کئے جاچکے ہیں،سعودی حکومت کے اس کارنامہ کوعالمِ اسلام انتہائی محبوبیت اورقدرومنزلت کی نگاہ سے دیکھتاہے۔برصغیرکے اُردوں داں طبقہ کے لئے اِس ادارے نے سب سے پہلے جس جامع اورمختصرترجمہ وتفسیرکے چھاپنے کااہتمام کیاوہ تفسیرعثمانی ہے۔کچھ عرصہ قبل اِس ادارہ نے فارسی ریاستوں اورفارسی زبان بولنے والوں کے لئے قرآن کریم کاآسان اورجدیدفارسی(درّی) ترجمہ چھاپنے اوراُسے فارسی داں حجاجِ کرام کوبطورِ ہدیہ پیش کرنے کے لئے مختلف ممالک کے علمائے کرام اورسفارت خانوں سے رابطہ کرکے اس سلسلہ میں رائے طلب کی،اِس سروے سے مجمع ملک فہدپرنٹنگ پریس کی انتظامیہ اورکمیٹی کے سامنے حضرت مولانامحمدانوربدخشانی صاحب کے فارسی ترجمہ قرآن کوچھاپنے کی رائے سامنےآئی،نیزپاک وہنداورفارسی بولنے والے بیشترعلمائے کرام نے بھی  اِس ترجمہ کوآسان فہم اورقابل اعتمادقراردیا۔استاذِمحترم مولانامحمدانوربدخشانی صاحب مشہورومعروف عالمِ دین ہیں،آپ برصغیرکے مایۂ نازعالم محدث العصرحضرت علامہ سیدمحمدیوسف بنوریؒ  (بانی جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن )کے خصوصی شاگرداورعالم اسلام کی مشہوردینی درس گاہ جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کے استاذِحدیث ہیں،نصف صدی ہونے کوہے کہ آپ مختلف علوم وفنون خصوصاًحدیث نبوی کی تدریس میں ہمہ وقت مشغول ہیں،عربی زبان میں مختلف علوم پرمشتمل آپ کی دودرجن سے زائد کتب نہ صرف اہل علم کے طبقہ میں مقبول اورانتہائی قدرکی نگاہ سے دیکھی جاتی ہیں بلکہ مختلف مدارس دینیہ  میں داخلِ نصاب ہیں۔آپ نے قرآن کریم کایہ فارسی ترجمہ تقریباً چھ سالوں میں مکمل کیا،عام  فہم ہونے کے ساتھ ساتھ یہ ترجمہ کئی منفردخصوصیات کاحامل ہے،پاکستان میں چندسالوں سے یہ ترجمہ شائع ہوتارہاہے اورالحمدللہ اندرون وبیروں ملک بہت جلداللہ تعالیٰ نے اس ترجمہ کو شہرت ومقبولیت نصیب فرمائی،اس سال الحمدللہ یہ ترجمہ قرآن کریم مجمع ملک فہدپرنٹنگ پریس سے شائع کیاجاچکاہے اورگزشتہ حج کے موقع پریہ ترجمہ فارسی زبان بولنے والے حجاجِ کرام کوبطورِ ہدیہ پیش کیاگیا۔عالمی سطح پراس ترجمہ کی اشاعت اورمقبولیتاورحرمین شریفین میں اس کی دستیابی بلاشبہ جہاں حضرت  مولانامحمدانوربدخشانی کے لئے سعادت کی بات ہے وہیں اہلِ پاکستان اورجامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاون کے لئے بھی ایک بہت بڑے اعزاز سے کم نہیں۔ہم مولانامحمدانوربدخشانی کوان کواس اعزازپرہدیۂ تبریک پیش کرتے ہیں،مجمع ملک فہدمدینہ منورہ اورخادم الحرمین الشریفین کے شکرگزارہیں۔ اوردعاگوہیں کہ اللہ تعالیٰ مترجِم کے لئے اس عظیم قرآنی خدمت کوذخیرۂ آخرت بنائے اورمسلمانوں کواس کے ذریعہ قرآن کریم سے تعلق جوڑنے اورتعلیماتِ قرآنیہ پر عمل کرنے کی توفیق نصیب فرمائے۔آمین

غلام مصطفی رفیق

g.mustafarafiq@gmail.com

0333-3136744