25
Rabi uthani

صحیح مسلم کے ابواب وتراجم

صحیح مسلم کے ابواب وتراجم

حسن ترتیب اور مضامین وموضوعات کی تقسیم ہرکتاب کی نہ صرف ضرورت ہوتی ہے، بلکہ اس سے استفادہ کی آسانی اور مطلوبہ مضمون وموضوع تک رسائی کا ذریعہ بھی بنتی ہے۔
موضوعات کے اعتبار سے کتابوں کی تقسیم کا ثبوت خود آسمانی کتابوں سے بھی ملتا ہے، بلکہ ان کتابوں کواس چیز کے لئے بنیاد کہنا چاہئے، مثلاً :زبور سے متعلق کہا جاتا ہے کہ اس کے موضوعات ومضامین مواعظ وحکم کے عنوان کے تحت آتے ہیں، یعنی وہ مواعظ وحکم کی کتاب ہے،جبکہ تورات وانجیل میں کئی موضوعات تھے، جو مواعظ وحکم کے علاوہ احکام وآداب وغیرہ سے متعلق تھے۔ یہی وجہ ہے کہ قرآن کریم کے ساتھ جب موضوعات کے اعتبار سے سابقہ کتابوں کا مقارنہ کیا جاتا ہے تو تورات وانجیل کو مقدم ذکر کیا جاتا ہے، کیونکہ ان دونوں کتابوں میں موضوعات کی تقسیم اور

مزید پڑھیے

17
Rabi uthani

فنِ تحریر

بسم اللہ الرحمن الرحیم 
فنِ تحریر
( احوال وگزارشات)
ابودحیہ نعمانی
لکھناایک فن ہے ، یہ وہ ملکہ ہے جو عطیہ خداوندی ہے اور بعض لوگوں کو وہبی طور پر حاصل ہوتا ہے ، انہیں لکھنے کے لئے زیادہ محنت کی ضرورت نہیں ہوتی ،بعض لوگ اس خزانہ خداوندی کو استعمال کرکے ایک دبستان علم قائم کرجاتے ہیں ، لیکن بہت سارے لوگ اس نعمت خداوندی سے واقف نہیں ہوتے کہ انہیں یہ ملکہ حاصل بھی ہے یا نہیں ، وہ اس مشک کو اپنے نافے میں لئے پھرتے ہیں ، انہیں اس گہر کا اندازہ نہیں ہوتا ، اور یوں یہ قیمتی سرمایہ اس کے ساتھ سپرد خاک ہوجاتا ہے ۔
کچھ نفوس اس وہبی صلاحیت سے بظاہر محروم نظر آتے ہیں ، لیکن حقیقت میں ہوتے نہیں ، مشیت ایزدی انہیں ان کی طلب کے بقدر دے کر مزید آگے سے آگے بڑھانا چاہتی ہے ، اس لئے ابتداء انہیں بہت محنت کرنی پڑتی ہے او

مزید پڑھیے

17
Rabi uthani

مجموعۂ چہل احادیث

بسم اللہ الرحمن الرحیم

مجموعۂ چہل احادیث

چہل احادیث کے جمع کرنے کا سب سے بڑا محرک رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ قول ہے : ’’ من حفظ علی امتی أربعین حدیثا من امر دینھا بعثہ اللہ في زمرۃ الفقھاء ‘‘۔(۱)
یہ حدیث مختلف صحابہ کرام رضی اللہ عنہم سے منقول ہے ، اگرچہ اس کے تمام طرق ضعیف ہیں (۲)لیکن کثرت طرق کی بناء پر اس کا ضعف کم ہو گیا ۔(۳)
ابن عساکر رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ : یہ حضرت عمر ، حضرت علی ، حضرت عبداللہ بن مسعود ، حضرت ابودرداء ، حضرت معاذ ، حضرت ابو امامہ ، حض

مزید پڑھیے

17
Rabi uthani

میت کی تجہیز و تکفین کے لیے قائم کمیٹیوں کی شرعی حیثیت

آج کل مختلف مقامات پر خاندان اور برادری میں میت کمیٹیاں بنانے کا رواج چل پڑا ہے، اس کمیٹی کا مقصد یہ ہوتا ہے کہ کمیٹی کے کسی ممبر کے گھر میں اگر خدانخواستہ موت کا سانحہ پیش آجائے تو اس کی تجہیزوتکفین کا خرچہ برداشت کیا جائے، نیز میت کے گھر والوں اور تعزیت کے لیے آئے مہمانوں کے لیے کھانے کا بندوبست کرنا بھی اسی کمیٹی کی ذمہ داری شمار ہوتی ہے، اس کمیٹی کا ممبر صرف ایک خاندان یا برادری یا محلے کے لوگوں کو بنایا جاتا ہے، ممبر بننے کے لیے شرائط ہوتی ہیں، مثلاً یہ کہ ہر ماہ یا ہر سال ایک مخصوص مقدار میں رقم جمع کرانا لازم ہے، اگر یہ رقم جمع نہ کرائی جائے تو ممبر شپ ختم کردی جاتی ہے، جس کے بعد وہ شخص کمیٹی کی سہولیات سے فائدہ نہیں اُٹھا سکتا، عام طور پر یہ کمیٹیاں دو طرح کے اخراجات برداشت کرتی ہیں:
۱:
مزید پڑھیے

7
Rabi uthani

حضرت مولاناڈاکٹرمحمدحبیب اللہ مختارشہیدرحمہ اللہ

بسم اللہ الرحمن الرحیم 

حضرت مولانا ڈاکٹرمحمدحبیب اللہ مختارشہیدرحمہ اللہ اپنے دورکے محقق علماء میں سے تھے،اہل علم کے حلقہ میں آپ کااسمِ گرامی مشہورومعروف ہے،،اللہ تعالیٰ نے آپ کوبیک وقت بے شمارخوبیاں،ان گنت صلاحیتیں  عطافرمائی تھیں۔علمی اورتحقیقی میدان میں آپ کی خدمات مسلم اورانتظامی معاملات میں آپ کی مدبرانہ اوردوررَس نگاہ کے سبھی معترف ہیں۔اصول پسندی اورقواعدوضوابط کی پاسداری میں آپ اپنی مثال آپ تھے،وقت کی قدروقیمت نے آپ کی شخصیت کوچارچاندلگادیئے تھے،چنانچہ نہایت ہی مختصر عرصہ میں آپ تنِ تنہاایک پوری جماعت کاکام کرکے،سینے پرشہادت کاتمغۂ سجائےاس دارِفانی سے دارِبقاکی جانب  روانہ ہوگئے اوراپنے بعدوالوں کے لئے ایک آئیڈیل اورنمونہ بن گئے۔حضرت مولانامحمدڈاکٹرحبیب اللہ مختار1944ء میں دہلی میں پیداہوئے،آپ کے وال

مزید پڑھیے