Tafheem e Islam | Aap k Masail Aur Un Ka Hal

پلاٹ صرف نیت سے تجارتی نہیں کہلائے گا



سوال:۔ میں ایک پلاٹ خرید ا تھا اورمقصد یہ تھا کہ کچھ وسائل جمع ہوں تو اس پر تعمیر کرکے رہائش اختیار کرلوں  مگر دوتین سال  سے کوشش کے باوجود میرے لیے اس پر تعمیر ممکن نہیں ہوپارہی ہے ۔اب میرے پاس راستہ یہ ہے کہ میں اسے بیچ کرکوئی کاروبار کروں اورپھر اگر اللہ کو منظور ہو تو کوئی اورپلاٹ یا بنابنایا گھر خریدوں۔کیا مجھے اب اس پلاٹ پر زکاۃ دینی ہے یا نہیں کیونکہ میں اسے بیچنے اورکاروبار میں لگانے کا ارادہ  رکھتا ہوں؟
 
جواب:۔صرف تجارت کی نیت سے مذکورہ  پلاٹ پر زکاۃ واجب نہیں ہے بلکہ فروخت کے بعد جو رقم وصول ہو،زکاۃ کی تاریخ آنے پر اس کی زکاۃ نکال دیجیے گا اوراگر آپ پہلے سے صاحب نصاب نہ ہوں تو پھر جب پلاٹ سے ملنے والی رقم پر سال گزرجائے تو زکاۃ کا اداکرنا لازم ہوگا۔